اشاعت کے باوقار 30 سال

مسلمان زیادہ بچے پیدا کر کے بھارت پر قابض ہونا چاہتے ہیں

مسلمان زیادہ بچے پیدا کر کے بھارت پر قابض ہونا چاہتے ہیں

نئی دہلی: بھارت میں حکمران جماعت بی جے پی کے رہنما اور رکن اسمبلی بنواری لال سنگھال نے کہا ہے کہ مسلمان زیادہ بچے پیدا کر کے بھارت پر قابض ہونا چاہتے ہیں۔ بھارتی میڈیا سے بات کرتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی کے سرکردہ رہنما بنواری لال سنگھال نے مسلمانوں کے خلاف ایک بار پھر ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا کہ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت مسلمان اپنی آبادی میں مسلسل اضافہ کر رہے ہیں جس کا مقصد تمام انتخابی حلقوں میں مسلمان ووٹرز کا اضافہ کر کے انتخابات میں واضح برتری حاصل کرنا ہے، ایک مسلمان خاندان کم از کم 10 سے 12 بچے پیدا کر رہا ہے جب کہ ہندو جوڑا ایک یا زیادہ سے زیادہ 2 بچوں تک محدود ہے اگر یہی صورت حال رہی تو 2030 میں پورے بھارت پر مسلمانوں کا قبضہ ہو گا، یہاں تک کہ صدر، وزیر اعظم، وزرائے اعلیٰ اور اکثریتی ریاستوں پر مسلمان کامیابی حاصل کر لیں گے۔ بنواری لال نے کہا کہ مسلمانوں کو ترقی اور تعلیم سے کوئی غرض نہیں اور ان کا سارا زور اولاد میں اضافے پر ہے جب کہ ہندو خاندان یہ سوچ کر کم بچے پیدا کر رہا ہے کہ انہیں اعلیٰ تعلیم کس طرح دلائیں گے۔ انہوں نے کہا کوئی بھی مسلمانوں کی اس چال کو نہیں سمجھ رہا اور نہ اسے روکنے کے لیے اقدامات ہو رہے ہیں، مسلمانوں کی سوچی سمجھی سازش ہے کہ کس طرح اس ملک پر قابض ہونا ہے اسی غرض سے وہ اپنی آبادی میں مسلسل اضافہ کر رہے ہیں۔

loading...