اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

معمر قذافی کو ہلاک کر دیا گیا

کور کمانڈر لاہور کی گورنر پنجاب سے الوداعی ملاقات

کور کمانڈر لاہور کی گورنر پنجاب سے الوداعی ملاقات

لاہور: کور کمانڈر لاہور لیفٹیننٹ جنرل صادق علی نے گورنر ہاؤس لاہور میں گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ سے الوداعی ملاقات کی۔ملاقات میں اہم قومی امورپر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ ملک کا دفاع مضبوط و توانا ہاتھوں میں ہے، پوری قوم پاکستان کی حرمت اور عزت کے لیے دشمنوں کے مذموم عزائم کو خاک میں ملانے کے لیے اپنی پاک فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ ملک سے انتہا پسندی کا خاتمہ، دہشتگردوں اور ان کے سہولت کاروں کی بیخ کنی حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا ضرب عضب اور آپریشن ردالفساد نے دہشت گردوں کی کمر توڑ دی ہے اور آج ہم پہلے سے کہیں زیادہ محفوظ ملک میں زندگی گزار رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی سیاسی و عسکری قیادت اور تمام ادارے دہشت گردی سمیت تمام چیلنجز سے نبرد آزما ہونے کے لئے متفق ہیں جو ایک خوش آئند پہلو ہے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ وطن کی سلامتی ہمیں اپنی جان سے بھی زیادہ عزیز ہے، ملک کو غیر مستحکم کرنے والے عناصر اپنے مذموم عزائم میں کبھی کامیاب نہیں ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان دفاعی اعتبار سے مضبوط ترین ملک ہے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ امن و امان کو قائم رکھنا اور عوام کی جان و مال کی حفاظت موجودہ حکومت کے منشور کا بنیادی نقطہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو معاشی ترقی کی راہ پر گامزن کر دیا گیا ہے، پاک چائنہ راہ داری کا منصوبہ ملک میں معاشی انقلاب برپا کرنے میں سنگِ میل ثابت ہو گا۔ کور کمانڈر لاہور لیفٹیننٹ جنرل صادق علی نے کہا کہ ملک کو درپیش موجودہ چیلنجز سے نمٹنے کے لیے پاک فوج پوری یکسوئی کے ساتھ اپنی ذمہ داریاں نبھا رہی ہے۔ انہوں نے کہا وطنِ عزیز کی سلامتی اور امن کے لئے فوج، پولیس اور دیگر اداروں نے جو قربانیاں دی ہیں وہ کبھی رائیگاں نہیں جائیں گی۔ دریں اثناء، نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی کے زیر اہتمام 19ویں نیشنل سکیورٹی ورکشاپ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ نے کہا ہے کہ مضبوط جمہوریت ہی مستحکم پاکستان کی بنیاد ہے اور جمہوری نظام کی کامیابی گڈگورننس، شفافیت، موثر احتسابی عمل اور کرپشن کی بیخ کنی سے وابستہ ہے۔ انہوں نے کہ ہم سب کو پاکستان سے محبت ہے، ساری جماعتیں محب وطن ہیں، ہمیں مل بیٹھ کر ملکی مسائل کے حل کے لئے مثبت سوچ کے ساتھ آگے بڑھنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ زندہ قومیں ہی چیلنجز سے مقابلہ کر کے پروان چڑھتی ہیں اور باہمی اتحاد سے کامیابی سے ہمکنار ہوتی ہیں۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ بلاشبہ پاکستان ایک امن پسند اور ذمہ دار ایٹمی طاقت ہے جس نے خطے کی سلامتی کے لئے دورِ حاظر کے سب سے بڑے دہشت گردی کے چیلنج کا نہ صرف مقابلہ کیا بلکہ آج بھی اس ناسور کو ختم کرنے کے لیے مصروفِ عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاک فوج نے آپریشن ضرب عضب اور ررادالفساد سے دہشت گردوں کی کمر توڑ دی ہے اور ان علاقوں میں دوبارہ امن بحال کر دیا ہے جو دہشت گردی کی زد میں تھے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ پاکستان اپنے تمام ہمسایہ ممالک سے خلوص نیت اور تہہ دل سے برابری کی سطح پر تعلقات کا خواہاں ہے اور اس بات پر یقین رکھتا ہے کہ پُر امن افغانستان ہی مستحکم پاکستان کی ضمانت ہے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ موجودہ حکومت نے جب سے اقتدار سنبھالا تو اسے مختلف چیلنجز کا سامنا تھا جس میں سب سے اہم امن و امان کی بحالی اور توانائی بحران کا خاتمہ تھا اس ضمن میں حکومت نے نہ صرف طویل دورانیے کی لوڈ شیڈنگ پر قابو پایا بلکہ توانائی کے نئے پراجیکٹس کی تکمیل سے آئندہ سال تک بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا ہمیشہ کے لئے خاتمہ کر دیا جائے گا۔ اس موقع پر گورنر پنجاب نے شرکاء کی جانب سے کئے گئے مختلف سوالات کے جواب دیتے ہوئے کہا کہ معاشرے میں کردار اور فعل کا تضاد ختم ہونا چاہئے کیونکہ اب بیٹھ کر سوچنے کا نہیں بلکہ فیصلہ کرنے کا وقت ہے۔ انہوں نے کہا اس بات پر کسی کو اختلاف نہیں کہ ملک پُر امن ہو یہاں ترقی، خوشحالی اور استحکام ہو۔ ایک اور سوال کے جواب میں گورنر نے کہا کہ سرمایہ کاروں کو ملک میں سرمایہ کاری کی غرض سے سازگار ماحول میسر کرنا حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے جس کا ثبوت چائینہ کی طرف سے سی پیک کی شکل میں وسیع سرمایہ کاری کرنا ہے۔ تقریب میں ممبران پارلیمنٹ، حکومتی اداروں کے سول و فوجی افسران اور مختلف مکاتبِ فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی۔ وفد کی قیادت ریئر ایڈمرل زین ذوالفقار (ہلالِ امتیاز ملٹری) نے کی۔