اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

صدام حسین کو گرفتار کر لیا گیا

کیا آپ کیلے کا چھلکا پھینک دیتے ہیں؟

کیا آپ کیلے کا چھلکا پھینک دیتے ہیں؟

ویسے تو کیلے کھانے کے فائدوں سے سب ہی واقف ہوں گے لیکن کیلے کے چھلکے بھی کسی صورت غیر اہم نہیں کیونکہ ان میں قدرتی طور پر بہت سی طبی خصوصیات پنہاں ہیں۔
کیلے کے چھلکے کے چند دلچسپ اور مفید استعمال ملاحظہ کریں:

دانت چمکائیں
آپ دانتوں کے پیلے پن سے پریشان ہیں تو فکر نہ کریں، بس ایک کیلے کا چھلکا لیں اور چمچے سے چھلکے کا سفید گودا الگ کر کے اسے پیس لیں۔ اب اس پیسٹ کو دن میں کم از کم دو بار ضرور لگائیں۔ یہ عمل 15 دن تک جاری رکھنے سے دانتوں کا پیلا پن دور اور چمک پیدا ہو گی۔ کیلے کے چھلکے میں موجود پوٹاشیم، میگنیشیم اور مینگنیز دانتوں پر جمے پيلے پن کو دور کرنے میں مدد کرتا ہے۔

مسے ختم
جلد پر مسوں کی موجودگی دیکھنے میں بدنما لگتی ہے جس سے بعض اوقات شخصیت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں لیکن اب آپ گھر بیٹھے ان سے بہ آسانی چھٹکارا پا سکتے ہیں اور اس کے لیے کسی سرجری کی ضرورت بھی نہیں پڑتی۔ روزانہ کیلے کے چھلکے کو مسوں پر رگڑا جائے اور رات بھر ایسے ہی چھوڑ دیا جائے تو جلد پر موجود مسے ختم ہو جاتے ہیں اور مستقبل میں مسوں کو نمودار ہونے سے روکتے ہیں۔

وزن گھٹائیں
بڑھتے وزن سے آپ کو فکرمندی لاحق ہے تو اب اطمینان رکھیں کہ قدرت نے کیلے کے چھلکے میں وزن گھٹانے کا علاج رکھا ہے۔ دوپہر کے کھانے کے بعد دو عدد کیلے کے چھلکوں کے اندرونی حصے میں موجود سفید گودے کو نکال کر چھلکے کو پیس کر کھا لیں اور رات کے کھانے سے پرہیز کریں۔ ایک مہینے تک یہ عمل جاری رکھنے سے حیران کن نتائج سامنے آئیں گے اورکم از کم 5 پاونڈ تک وزن میں کمی آئے گی۔

خارش، سوزش، داد سے نجات
کیلا انسانی جلد کی صحت کےلیے بہترین ہے۔ جلد پر خارش اور سوزش سے نجات حاصل کرنے کے لیے کیلے کا چھلکا استعمال کیا جا سکتا ہے۔ خارش اور سوزش سے متاثرہ حصے پر کیلے کا چھلکا مسلنے سے افاقہ ہو گا جب کہ جلد کے کسی حصے پر داد کی جلن پر کیلے کا چھلکا رگڑنے سے راحت محسوس ہوتی ہے۔

درد کا علاج
سر میں درد ہو یا ایڑی میں، دوا کھانے کی ضرورت نہیں۔ بس کیلے کے چھلکے کا پیسٹ متاثرہ جگہ پر لگائیں اور درد کو دور بھگائیں۔ چھلکے میں موجود میگنیشیم شریانوں میں سرایت کر کے درد کو روکنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

loading...