اشاعت کے باوقار 30 سال

پینٹاگون اور وائٹ ہاؤس میں اختلافات

پینٹاگون اور وائٹ ہاؤس میں اختلافات

واشنگٹن: امریکی اخبار نیویارک ٹائمز نے ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ شمالی کوریا کے معاملے پر امریکی محکمہ دفاع اور ٹرمپ انتظامیہ کے درمیان اختلافات پائے جاتے ہیں۔ وائٹ ہاؤس اس بات پر نالاں نظر آتا ہے کہ شمالی کوریا پر حملے کے لیے پینٹاگون صدر ٹرمپ کو کسی قسم کا کوئی اختیار یا انتخاب نہیں دے رہا۔ صدر ٹرمپ کے مشیر سلامتی لیفٹیننٹ جنرل ریمنڈ مک ماسٹر کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ کی جانب سے شمالی کوریا کو دی جانے والی دھمکیوں کے قابل اعتماد ہونے کے لیے ضروری ہے کہ امریکا کے پاس حملے سے متعلق ایک عمدہ اور طے شدہ منصوبہ ہو۔ جنرل مک ماسٹر کا کہنا ہے کہ وہ مذاکرات کے حق میں ہیں تاہم ماضی میں مذاکرات کی صورت میں شمالی کوریا کو بہت سے زیادہ رعایت دینا پڑی تھی۔ دوسری جانب امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کا کہنا ہے کہ اسے پریشانی یہ ہے کہ وائٹ ہاؤس کوریائی خطے میں فوجی کارروائی کے حوالے سے جلد بازی سے کام لے رہا ہے جس کے نتائج تباہ کن ہو سکتے ہیں۔ وزیر دفاع جیمز میٹس اور چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف جنرل جوزف ڈنفورڈ کا موقف ہے کہ مسئلے کے حل کے لیے سفارت کاری سے کام لیا جائے۔

loading...