اشاعت کے باوقار 30 سال

آصف زرداری نے شریف برادران کو بند گلی میں دھکیل دیا

آصف زرداری نے شریف برادران کو بند گلی میں دھکیل دیا

اسلام آباد : ہر طرح کی سیاسی مشکلات میں گِھری ہوئی مسلم لیگ (ن) کی کمزوریوں کا فائدہ اٹھاتے ہوئے سابق صدر آصف علی زرداری نے نہ صرف بلوچستان کے تخت پر قبضہ کر لیا ہے بلکہ آئندہ سینیٹ الیکشن میں ایک بار پھر پیپلز پارٹی کی فتح کی بنیاد بھی رکھ دی ہے۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو نے سابق صدر آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو زرداری کے 20 جنوری کو پرتپاک استقبال کے لئے دعوت نامے بھجوا دئے۔ مسلم لیگ (ن) کے صدر میاں نواز شریف منحرف ہونے والے 14 ایم پی ایز کو ڈی سیٹ کروانے کے حوالے سے گو مگو کا شکار ہو گئے۔ 14 ایم پی اے ڈی سیٹ ہوئے تو سینیٹ الیکشن مقررہ وقت پر نہیں ہو سکیں گے جو مسلم لیگ (ن) کے لئے بہت بڑا سیاسی دھچکہ ہوگا۔ تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اگرچہ شریف برادران پر کاری ضربیں لگا چکے ہیں اس سے ان کی مقبولیت میں بھی اضافہ ہوا لیکن سیاست میں تحمل مزاجی کا شہرہ رکھنے والے آصف علی زرداری نے مسلم لیگ (ن) کی گرتی ہوئی ساکھ اور گھبرائی ہوئی قیادت کا فائدہ اٹھا کر انتہائی چپکے سے بلوچستان کی حکومت حاصل کر لی ہے۔ بلوچستان میں قدم جمانے کے لئے سابق صدر آصف علی زرداری نے دو ماہ پہلے آغاز اس وقت کیا تھا جب عبدالقدوس بزنجو کے چچا کی وفات پر اظہار افسوس کے لئے آصف علی زرداری تشریف لے گئے تھے۔ وہیں پر آصف علی زرداری نے پہلے عبد القدوس بزنجو سے سیاسی امور طے کئے اور پھر مزید ہوم ورک کے لئے ڈاکٹر قیوم سومرو کو خصوصی مشن پر کوئٹہ روانہ کر دیا۔ عبدالقدوس بزنجو اور ڈاکٹر قیوم سومرو نے صوبائی وزیر داخلہ سرفراز بگٹی سمیت مسلم لیگ (ن) کے 14 ایم پی اے کو اپنا ہم نوا بنایا اور ساتھ ہی جمعیت علماء اسلام نے بھی آصف علی زرداری کی پرانی دوستی کی لاج رکھتے ہوئے ثناء اللہ زہری سے بغاوت کر دی۔ ذرائع کے مطابق آصف علی زرداری اور مولانا فضل الرحمن اس سیاسی آپریشن کے دوران مسلسل رابطے میں رہے۔ مصدقہ ذرائع کے مطابق صدر آصف علی زرداری نے مسلم لیگ (ن) کے منحرف ہونے والے 14 ایم پی اے کو مستقبل میں 3 سینیٹ کی نشستیں بھی دینے کا وعدہ کیا ہے اور آئندہ سینیٹ الیکشن میں کامیابی کے بعد پیپلز پارٹی کی طرف سے محترمہ فریال تالپور چیئرمین سینیٹ بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔ گزشتہ روز میاں نواز شریف نے اس صورت حال کی سنگینی کو محسوس کرتے ہوئے وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کو طلب بھی کیا تھا اور فلور کراسنگ کرنے والے 14 ایم پی ایز کے خلاف قانونی کارروائی شروع کرنے پر تبادلہ خیالات کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق آصف علی زرداری نے بہترین سیاسی چال کے ذریعے شریف برادران کو بند گلی میں دھکیل دیا ہے کیونکہ اگر 14 ایم پی ایز کو ڈی سیٹ کروایا گیا تو پھر آئندہ سینیٹ الیکشن بر وقت نہیں ہو سکیں گے اور یہ مسلم لیگ (ن) کی سیاسی موت ہو گی اور اگر یہ الیکشن ہوئے تو پیپلز پارٹی ایک بار پھر سینیٹ میں اکثریتی پارٹی بن کر ابھرے گی اور آنے والی کسی بھی وفاقی حکومت کے لئے پیپلز پارٹی ناگزیر سمجھی جائے گی۔ سابق صدر آصف علی زرداری ایک طرف آج سے طاہر القادری کی امامت میں پنجاب حکومت گرانے کے لئے شروع ہونے والے احتجاج میں شریک ہو رہے ہیں جب کہ دوسری طرف بلوچستان میں کامیاب فتح کے بعد سینیٹ کی فتح کی چابی بھی جیب میں ڈال چکے ہیں۔ پاکستان کی سیاست میں آصف علی زرداری نے ایک نیا ریکارڈ بھی بنا دیا ہے کیونکہ مسلم لیگ (ق) کے پانچ ممبران کے تعاون سے مسلم لیگ (ن) کی حکومت کو زمین بوس کر کے پیپلز پارٹی کی حکومت بنا لینا پاکستان کی سیاسی تاریخ میں ایک کارنامہ اور ریکارڈ تصور کیا جائے گا۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ مسلم لیگ (ق) کی قیادت بلوچستان میں اپنے پانچ اراکین صوبائی اسمبلی کو تقریباً بھول چکی تھی اور چوہدری شجاعت حسین اور چوہدری پرویز الٰہی کو اس سیاسی آپریشن کا علم اس وقت ہوا جب کوئٹہ سیاسی سرگرمیوں کا مرکز بنا۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو اور ان کی کابینہ 20 جنوری کو حب میں ایک جلسہ عام کرنے جا رہے ہیں جس کے مہمان خصوصی آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو زرداری ہیں۔ آئندہ کے سیاسی سیٹ اپ میں پیپلز پارٹی کو سندھ، بلوچستان میں کامیابی کے ساتھ ساتھ اب سینیٹ میں بھی کامیابی کا یقین ہے۔

loading...