اشاعت کے باوقار 30 سال

مستقبل قریب میں شدید بارشوں اور سیلاب کا امکان

مستقبل قریب میں شدید بارشوں اور سیلاب کا امکان

میامی: محققین نے خبردار کیا ہے کہ عالمی ماحولیاتی تبدیلی سے مسقتبل قریب میں بارشوں اور سیلاب کا امکان ہے جس کی لپیٹ میں آ کر امریکا اور ایشیا کے مختلف حصوں میں رہنے والے کروڑوں لوگ متاثر ہو سکتے ہیں جبکہ پاکستان میں اس کی شدت دگنی ہو جائے گی۔اسٹڈی ان دی جنرل سائنس ایڈوانسز کی ایک رپورٹ میں آئندہ 25 سالوں میں بڑے سیلاب کے خطرات کے پیش نظر اس بات کا حساب لگایا گیا ہے کہ سیلاب کی حفاظت کے لیے مزید کیا اقدامات کی ضرورت ہو گی۔ رپورٹ میں پیشگوئی کی گئی ہے کہ بارشوں سے سب سے زیادہ متاثر ایشیا ہو گا جس کے باعث 2040 تک ایک کروڑ 60 لاکھ لوگ بے گھر ہو جائیں گے یا نقل مکانی کرنے پر مجبور ہوں گے۔ پاکستان کے حوالے سے رپورٹ میں انکشاف کیا کہ حکومت کی جانب سے احتیاطی تدابیر اختیار نہیں کی گئی تو 2040 تک سیلاب کے متاثرین کی تعداد 1 کروڑ 11 لاکھ سے زائد ہو گی۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ جنوبی امریکا میں بھی سیلاب متاثرین کی تعداد اسی دورانیے میں 1 کروڑ 20 لاکھ جبکہ افریقی ممالک میں 3 کروڑ 40 لاکھ شہری بے گھر ہو سکتے ہیں۔ عالمی ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے یورپی ممالک خصوصاً جرمنی میں بھی متاثرین کی تعداد موجودہ اعداد و شمار کے مقابلے میں 7 گنا بڑھ کر تقریباً 7 لاکھ تک پہنچ سکتی ہے۔ دوسری جانب شمالی امریکا میں بارش اور سیلابی ریلے سے 10 لاکھ لوگ بے سرو ساماں ہو سکتے ہیں۔ پوسٹوم انسٹی ٹیوٹ فار کلائمیٹ ریسرچ کے محقق اور مصنف ایسوین ویلنر نے امریکا کو خبر دار کیا ‘ اگر اگلے 20 برسوں میں امریکا کو سیلابی افتاد سے بچنے میں دلچسپی ہے تو واشنگٹن کے اختیار کردہ موجودہ حفاظتی عمل کو دگنا کرنا ہو گا’۔ اگلے چند برسوں میں سیلابی صورتحال بننے کی بڑی وجہ حیاتیاتی ایندھن کا اخراج ہے جس پر قدغن لگانے کی اشد ضرورت ہے۔

loading...