اشاعت کے باوقار 30 سال

فرانس کا یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے سے انکار

فرانس کا یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے سے انکار

پیرس: فرانس نے مقبوضہ بیت المقدس (یروشلم) کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے سے انکار کر دیا۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق فرانس کے صدر ایمانوئل میکرون نے صیہونی وزیر اعظم نیتن یاہو سے ملاقات کے دوران مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے سے انکار کر دیا۔ امریکا کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے کے بعد اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو اپنے پہلے دورے پر یورپ پہنچے جہاں پیرس میں انھوں نے فرانس کے صدر سے ملاقات کی۔ بعد ازاں فرانسیسی صدر نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اسرائیلی وزیر اعظم پر واضح کیا ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس پر امریکی صدر کا یک طرفہ فیصلہ خطے کے امن کے لئے خطرناک ہے جس کی فرانس مخالفت کرتا ہے۔
فرانسیسی صدر نے اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو پر زور دیا کہ فلسطینی علاقوں میں غیر قانونی یہودی آباد کاری کے منصوبوں کو فوری روکا جائے اور اس فیصلے سے یہ تاثر ملے گا کہ اسرائیل قیام امن کے لئے سنجیدہ ہے۔ فرانسیی صدر کے بیان پر رد عمل میں اسرائیلی وزیر اعظم نے کہا کہ یروشلم ہزاروں سال سے اسرائیل کا دارالحکومت ہے، فلسطینیوں کو یہ حقیقت ’تسلیم‘ کر لینی چاہیے، جتنی جلدی اس حقیقت کو تسلیم کیا جائے گا اتنی ہی جلد ہم امن کی جانب بڑھیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ جلد یا بدیر فلسطینی بھی اس حقیقت کو تسلیم کر لیں گے کہ بیت المقدس اسرائیل کا دارالحکومت ہے اور بہت جلد دنیا میں امن ہو جائے گا۔

loading...