اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

پہلے ہوائی جہاز کی پرواز

سردی اور زکام سے بچاؤ کے لیے قدرتی مشروبات

سردی اور زکام سے بچاؤ کے لیے قدرتی مشروبات

کراچی: انسان کا مدافعتی نظام نقصان دہ اور بیمار کرنے والے جراثیم سے لڑنے کے لیے قدرتی ہتھیار ہے جو بیماریوں کو جسم پر حملہ آور نہیں ہونے دیتا تاہم مدافعتی نظام کی بھی ایک حد ہوتی ہے اور جب زیادہ طاقتور جراثیم انسان پر حملہ کرتے ہیں تو مدافعتی نظام کمزور پڑ جاتا ہے اور انسان بیمار ہو جاتا ہے اس صورت میں اینٹی بائیوٹک اور ویکسین لے کر مدافعتی نظام کو جراثیم کے خلاف لڑنے کے لیے پھر سے تیار کیا جاتا ہے۔ بعض اوقات دوائیاں اور ویکسین جہاں انسان کو فائدہ پہنچاتی ہیں وہیں نقصان بھی پہنچاتی ہیں لہٰذا یہاں قدرتی اجزا سے بھرپور مشروبات سے متعلق بتایا جا رہا ہے کیونکہ قدرتی مشروبات میں ایسے کئی اجزا موجود ہوتے ہیں جن کے استعمال سے سردی، ٹھنڈ اور نزلے کے اثرات سے بچا جا سکتا ہے۔
سیب، گاجراور موسمی کا جوس:
یہ قدرتی مرکب کئی وٹامنز پر مشتمل ہوتا ہے۔ مثلاً وٹامن بی 6، وٹامن اے اور سی کے علاوہ پوٹاشیئم اور فولک ایسیڈ جو سردیوں سے متعلق امراض جیسے نزلہ، زکام اور فلو سے محفوظ رکھتے ہیں۔
گریپ فروٹ کاجوس:
کینو اور مالٹا کی فیملی سے تعلق رکھنے والا پھل گریپ فروٹ وٹامن سی کا اہم ترین جزو سمجھا جاتا ہے جو ٹھنڈ اور فلو کا مقابلہ کرتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ اینٹی آکسیڈنٹ میں بھی شمار کیا جاتا ہے جو جسم کو بیماریوں سے محفوظ رکھتے ہیں۔
ٹماٹر کاجوس:
عام طور پر سبزی کے طور پر استعمال ہونے والا پھل ٹماٹر تقریباً تمام لوگوں کا پسندیدہ ہے۔ ٹماٹر کا جوس موسم سرما میں خاص فائدہ پہنچاتا ہے کیونکہ یہ فولک ایسیڈ، فولاد اور وٹامن اے اور سی سے بھرپور ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ جسم کی قوت مدافعت کو مضبوط بناتا ہے۔
ٹماٹر، سلاد کے پتوں اور بند گوبھی کا جوس:
ٹماٹر، سلاد کے پتوں اور بند گوبھی کے جوس میں کئی مفید عناصر موجود ہوتے ہیں جن میں میگنیشئم ، پوٹاشئیم، فولاد ، فیٹی ایسیڈ اور وٹامن سی شامل ہیں۔ یہ جوس مدافعتی نظام کو مضبوط بناتا ہے اور اسے انفیکشنز جیسے امراض کے خلاف مزاحمت کرنے کے قابل بناتا ہے۔
چقندر، گاجر، ادرک اور ہلدی کا جوس:
ان چاروں سبزیوں کا جوس سردیوں میں بے حد مفید ہے کیونکہ اس میں فولاد، کیلشئیم، فولک ایسیڈ، وٹامن سی اور ای ہوتے ہیں جو فلو، ٹھنڈ، کھانسی، جسم میں درد اور گٹھیا سے متعلق جوڑوں کے درد کو کم کرتا ہے۔
اسٹرا بیری اور آم کاجوس:
اسٹرا بیری کہنے کو تو چھوٹاساپھل ہے لیکن اس میں قدرت نے بےشمار فائدے چھپاکر رکھے ہیں جب کہ آم بھی بےشمار فائدوں کاحامل ہوتا ہے۔ ان دونوں پھلوں کا جوس بہترین اینٹی آکسیڈنٹ ہوتا ہے جو انفیکشنز کے خلاف مزاحمت کرتا ہے اور فلو سے بچاتاہے۔
تربوز کا شربت:
تربوز کا شربت انسان کے مدافعتی نظام کو زیادہ اہلیت کے ساتھ کام کرنے ممعاون ثابت ہوتاہے۔ یہ پٹھوں کے درد میں کمی کرتاہے اور تھکن کے احساس کو روکتا ہے بالخصوص عمر رسیدہ افراد کو فلو سے بچاتا ہے۔
کیوی، اسٹرا بیری اور پودینے کا جوس:
کیوی، اسٹرا بیری اور پودینے کا جوس میگنیشئیم ، زنک، فولک ایسڈ کے علاوہ وٹامن سی ، اے اور بی 6 سے بھرپور ہوتاہے اور مدافعتی نظام کو مضبوط بناتا ہے۔
کدو کے بیجوں کا جوس:
کدو عام طور پر لوگوں کو زیادہ پسند نہیں ہوتا تاہم اس کے بیج بہت فائدے مند ہوتے ہیں۔ کدو کے بیجوں کا جوس مدافعتی نظام کو نہ صرف بڑھاتا ہے بلکہ اس کے بہت سے طبی فوائد ہوتے ہیں، یہ ہڈیوں کو مضبوط بنانے کے ساتھ یورینری سسٹم کو بھی بہتر بناتا ہے۔
پالک، بند گوبھی اور سلاد کے پتوں کا جوس:
ان تینوں سبزیوں کے جوس میں فولاد کی بڑی مقدار پائی جاتی ہے جس سے مدافعتی نظام کو تقویت حاصل ہوتی ہے۔

loading...