اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

صدام حسین کو گرفتار کر لیا گیا

ایک پاکستانی خاتون کی قابلِ تقلید جدوجہد

ایک پاکستانی خاتون کی قابلِ تقلید جدوجہد

تعلیم کیا ہے؟ تعلیم ایک ایسا شوق، ایک ایسا نشہ ہے جو اگر کسی انسان کو لگ جائے تو بس پھر وہ کائنات کے رازوں کو جاننے میں لگ جاتا ہے۔ تعلیم کو ہمارے مذہب میں بھی بہت اہمیت دی گئی ہے، یہ تعلیم ہی ہے جس نے ہمیں اسلام جیسا دین پڑھنے اور سمجھنے کی توفیق بخشی۔ علم دینی ہو یا دنیاوی، انسان کو اپنے رب سے قریب کر دیتا ہے۔ بحیثیت مسلمان ہم پر فرض ہے کہ ہم زیادہ سے زیادہ علم حاصل کرنے کی کوشش کریں۔
یہ تو وہ باتیں ہیں جو ہم اکثر سنتے رہتے ہیں، لیکن بعض وہ باتيں بھی ہیں جنہیں سن کر ہم ان سنی کر دیتے ہیں، دیکھ کر ان دیکھا کر دیتے ہیں یا شاید دیکھنا اور سننا ہی نہیں چاہتے۔ ہمارے ارد گرد بہت سی کہانیاں بکھری پڑی ہیں جن پر توجہ دیں تو زندگی گزارنے کا سلیقہ آ جائے۔ ہم نے اکثر دیکھا ہے کہ لڑکیاں جونہی میٹرک کا امتحان پاس کرتی ہیں، والدین کو فوراً ان کی شادی کی فکر لگ جاتی ہے۔ یہ فکر کرنا والدین کے لیے بجا ہے مگر کیا بچیوں کو تعلیم سے محروم کر دینا ان کے بنیادی حق پر ڈاکا نہیں؟ ہم اس پہلو سے کیوں نہیں سوچتے کہ اس کے نصیب میں آگے کیا کچھ ہو سکتا ہے؟ ہم اسے کم از کم اس قابل تو بنائیں کہ وہ زمانے کی سختی، دھوپ اور مشکلات کا سامنا کر سکے، معاشرے میں سر اٹھا کر چل سکے، اس کی اپنی بھی کوئی پہچان ہو۔ یہ معاملہ صرف لڑکیوں تک محدود نہیں، ہمارے معاشرے میں تعلیم کا مسئلہ لڑکوں کے ساتھ بھی درپیش ہے۔ یہ تعلیم سے دوری ہی کا نتیجہ ہے کہ جرائم کی شرح میں روز بہ روز اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔
میرے اس بلاگ کا مقصد آپ کو تعلیم کے فوائد پر لیکچر دینا نہیں بلکہ آج میں آپ کا تعارف ایک ایسی خاتون سے کروانا چاہتی ہوں جن سے میں ذاتی طور پر بہت متاثر ہوئی ہوں۔ میں کراچی یونیورسٹی کے شعبہ ابلاغ عامہ کی طالبہ ہوں۔ جب میں اپنی پہلی کلاس میں حاضر ہوئی تو وہاں نئے نئے چہرے نظر آئے، انہی میں ایک چہرہ تحسین فاطمہ کا تھا جو ہم نوجوانوں کے مقابلے میں خاصی بڑی تھیں، اس کے باوجود ان کے چہرے پر کسی قسم کی کوئی ہچکچاہٹ یا ملال کا شائبہ تک نہیں تھا بلکہ وہ بہت اطمینان اور اعتماد کے ساتھ بیٹھی تھیں۔
ایک پل کے لیے میرے دماغ میں اسی دقیانوسی سوچ نے جنم لیا کہ اس عمر میں تعلیم؟ کیا یہ ہمارے ساتھ گھل مل پائیں گی؟ شاید یہ زمانے کی جدت اور نئے تقاضوں سے بھی آشنا نہ ہوں۔ مگر جوں جوں وقت گزرتا گیا، مجھے احساس ہونے لگا کہ وہ ہم سب میں سب سے زیادہ پڑھنے کی شوقین ہیں۔ انہیں اردو زبان پر عبور حاصل ہے۔ میرے دماغ میں روایتی سوچ کی بنائی ہوئی تصویر کے رنگ پھیکے پڑنے لگے اور ایک پرعزم خاتون کی باوقار تصویر اس کی جگہ لینے لگی۔ عمروں میں اتنا فرق ہونے کے باوجود انہوں نے نہ صرف ہمارے ساتھ دوستی کا رشتہ قائم کیا بلکہ اساتذہ کے سامنے بھی خود کو منوایا۔
دوستی مضبوط ہونے کے بعد دھیرے دھیرے اس چہرے کے پیچھے چھپے درد اور جد و جہد کی حقیقت ہمارے سامنے آنے لگی جس کے باعث میں ان سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکی۔ میں نے سوچا کہ کیوں نہ یہ کہانی لوگوں تک پہنچائی جائے تاکہ نہ صرف عورتوں بلکہ معاشرے کے مردوں کو بھی اس بات کا حوصلہ ملے کہ جتنا ہو سکے اپنے بچوں کو مضبوط بنائیں اور ان میں تعلیم کی اہمیت کا احساس پیدا کریں تاکہ وہ ہر طرح کے حالات کا بہادری سے سامنا کر سکیں۔

بات کچھ یوں ہے کہ تحسین فاطمہ نے شادی کے چوتھے سال ہی اپنے شوہر کو کھو دیا، مگر انہوں نے غم کے اس پہاڑ کو اپنے لیے ہمت اور طاقت کا ذریعہ بنا لیا۔ وہ کہتی ہیں کہ دکھ کو خود پر سوار کرنے سے حاصل کیا ہوتا؟ اگر موت حقیقت ہے تو زندگی خوب صورت۔ یوں انہوں نے دو بیٹوں کے ساتھ سر اٹھا کر جینے کی جدوجہد شروع کر دی۔ کرنا خدا کا یہ ہوا کہ شوہر کے جانے کے چند ماہ بعد انہوں نے ایک اور پیاری سی بچی کو جنم دیا، اس طرح ذمے داری مزید بڑھ گئی۔ اس معاشرے میں عورت کے اکیلے رہنے کا مطلب صرف عورت ہی سمجھ سکتی ہے۔
لیکن ذرا ٹھہریئے! میری طرح آپ بھی یہی سمجھ رہے ہوں گے کہ تحسین فاطمہ کی تعلیم ادھوری رہ گئی ہو گی اور انہوں نے شاید سلائی کڑھائی کر کے بچوں کو پالا پوسا ہو گا۔
نہیں جناب! تحسین فاطمہ ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ خاتون ہیں۔ وہ شادی سے پہلے ایم اے کر چکی تھیں مگر شوہر کے انتقال کے بعد تنہا رہ گئیں۔ پھر انہوں نے ایک مشکل اور حیران کن فیصلہ کیا کہ وہ کسی کی بھی مدد کے بغیر اپنے بچوں کو خود پالیں گی تاکہ ان کے بچوں کی خود داری اور اعتماد مجروح نہ ہو؛ وہ مستقبل میں خود مختار اور اپنی ذات پر یقین رکھنے والے ہوں۔ انہوں نے اپنے اس فیصلے سے خوشی کا لطیف احساس لینا شروع کر دیا۔ انہوں نے اپنی زندگی کے ضابطے بنائے اور ان پر چلنے لگیں۔ سخت محنت، رات دن جد و جہد، بغیر کسی کی مدد کے بچوں کی عمروں کے ساتھ اپنی جاب کو ایڈجسٹ کیا۔ پہلے پارٹ ٹائم کام کیا اور جب بچے پرائمری اسکول میں آگئے تو فل ٹائم جاب کی۔ وہ اپنی ہمت کو اپنا سب سے بڑا ہتھیار اور ساتھی قرار دیتی ہیں۔ وہ تنہا تھیں، جوان تھیں اور عورت تھیں… ہمارے معاشرے میں کسی خاتون کے لیے یہ کوئی معمولی مسئلہ نہیں۔ مگر اب ان کی زندگی کا ایک نیا دور شروع ہو رہا تھا۔ ان کی صلاحیتوں کو دیکھتے ہوئے ایک ایف ایم چینل سے آفر آ گئی۔
اب دنیا بالکل بدل چکی تھی۔ تحسین فاطمہ کی آواز سامعین کے دلوں میں اترتی چلی گئی اور وہ شہرت کی کئی سیڑھیاں ایک ساتھ پھلانگ گئیں۔ وہ ریڈیو پر شستہ و شائستہ لب و لہجے کی مثال بن گئیں۔ ان کے موضوعات نے لاکھوں سامعین کی توجہ کھینچی۔ پھر اچانک آٹھ سال بعد انہیں ریڈیو چھوڑنا پڑا۔ انہوں نے گھر چلانے کے لیے نئی راہیں تلاش کرنا شروع کر دیں۔ ساتھ ساتھ اپنے علم اور صلاحیتوں کو مزید بڑھانے کی کوشش بھی جاری رکھی؛ اور یہی خواہش انہیں بائیس سال بعد پھر کراچی یونیورسٹی لے آئی۔
اب وقت تھا اپنے خوابوں کو تعبیر دینے کا۔ جب دوسرے بیٹے نے ایک نجی یونیورسٹی میں داخلہ لیا تو تحسین نے بھی کراچی یونیورسٹی کے شعبہ ابلاغ عامہ میں داخلہ لے لیا۔ انہیں شروع سے ہی ابلاغ عامہ پڑھنے کا شوق تھا جو وہ کچھ رکاوٹوں اور کچھ قسمت کی ستم ظریفی کی وجہ سے پورا نہیں کر پائی تھیں۔ مگر زندگی کے اس موڑ پر جہاں بہت سے لوگ سوچیں گے کہ اب پڑھنے کا کیا فائدہ؛ اب تو عمر نکل گئی ہے؛ تو بہتر ہے وہ یہ جان لیں کہ انسان ہر کام فائدے یا نقصان کےلیے نہیں کرتا۔ علم حاصل کرنے کے لیے عمر کی کوئی قید بھی نہیں۔
تحسین فاطمہ اپنی زندگی کے ہر لمحے سے کچھ نہ کچھ سیکھتی ہیں۔ ان کے مطابق یہ پڑھنے کا شوق ہی تھا جو آج ان کے کام آ رہا ہے۔ تحسین فاطمہ کی کہانی، ان کا اللہ کی ذات پر بھروسا، مشکل سے مشکل وقت میں بھی ہمت اور حوصلے سے کام لینا اور ان کی باوقار شخصیت ہم سب کے لیے لائقِ تقلید ہے۔ علم حاصل کرنے کے لیے عمر کی کوئی قید نہیں۔ زندگی جب اور جس وقت موقع دے، علم حاصل کر کے اسے آگے بڑھانا چاہیے تاکہ معاشرہ مستحکم ہو سکے۔ اسی طرح اپنی بیٹیوں کو بھی اتنا ہی مضبوط بنائیے جتنا بیٹوں کو بناتے ہیں۔

تحریر: طیبہ نور بشکریہ: ایکسپریس نیوز
نوٹ: ادارہ کا بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

loading...