اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

پہلے ہوائی جہاز کی پرواز

زمبابوے کے صدر پارٹی کی سربراہی سے برطرف

زمبابوے کے صدر پارٹی کی سربراہی سے برطرف

ہرارے: زمبابوے میں فوجی بغاوت کے بعد حکمران جماعت نے صدر رابرٹ موگابے کو جماعت کی سربراہی کے عہدے سے برطرف کر دیا ہے۔حکمران جماعت زمبابوے افریقین نیشنل یونین پی ایف کی سربراہی اب سابق نائب صدر ایمرسن منگاگوا کو سونپی گئی ہے جنھیں چند ہفتے قبل صدر موگابے نے فارغ کر دیا تھا۔ ایمرسن منگاگوا کو برطرف کرنے کے بعد کئی ایسے واقعات ہوئے جس کے بعد فوج نے مداخلت کر کے صدر موگابے کو نظر بند کر دیا تھا۔ ہفتہ کے روز ہزاروں افراد نے رابرٹ موگابے کے خلاف احتجاج کیا تھا جبکہ مسٹر موگابے نے اتوار کو اپنی نجی رہائش گاہ پر عسکری حکام سے ملاقات کی۔ ملک میں با اثر وار ویٹیرنز ایسوسی ایشن کے سربراہ نے برطانوی خبر رساں ادارے کو بتایا کہ اْن کی جماعت نے صدر موگابے کو ملک کی صدارت کے عہدے سے ہٹانے کے لیے بھی کام شروع کر دیا ہے۔ جبکہ خاتونِ اول گریس موگابے کو بھی جماعت سے نکال دیا گیا ہے۔ یاد رہے کہ چند روز قبل زمبابوے کی فوج نے ملک کا کنٹرول حاصل کر لیا تھا۔ رابرٹ موگابے 1980 سے زمبابوے میں اقتدار میں ہیں۔ بی بی سی کے مطابق موگابے کی برطرفی کے فیصلے کے بعد اجلاس میں موجود شرکا خوشی سے رقص کرنے لگے۔ انھوں نے کہا کہ برطرفی کے فیصلے کے اعلان کے وقت خوب جشن منایا گیا۔ پارٹی کی سربراہی سے برطرفی کا ابھی باقاعدہ آغاز ہو گا لیکن اس سے صدر موگابے پر دباؤ بڑھے گا اور اب صدر کی حیثیت سے اْن کے مواخدے کی راہ ہموار ہو رہی ہے۔

loading...