اشاعت کے باوقار 30 سال

ایرانی فٹبال ٹیم کے کپتان زیر عتاب

ایرانی فٹبال ٹیم کے کپتان زیر عتاب

تہران: ایران کے فٹ بال کلب نے قومی ٹیم کے کپتان مسعود شجاعی کو اسرائیل کے خلاف ایک میچ میں حصہ لینے پر آیت اللہ علی خامنہ ای سے معذرت نہ کرنے پر ٹیم سے نکال دیا ہے۔ ایران کے اسپورٹس اخبار ’خبر ورزشی‘ کی رپورٹ کے مطابق مسعود شجاعی سے کہا گیا تھا کہ وہ انسٹا گرام پر رہبر انقلاب اسلامی آیت اللہ علی خامنہ ای سے تحریری طور پر معافی مانگیں کیونکہ انہوں نے ایتھنز میں ہونے والے فٹ بال مقابلوں میں یونانی فٹ بال کلب ’پانینیس‘ کی نمائندگی کرتے ہوئے اسرائیلی فٹ ٹیم کے خلاف مقابلے میں حصہ لیا تھا۔ تاہم شجاعی نے سپریم لیڈر سے کسی قسم کی معذرت کرنے سے انکار کر دیا اور کہا ہے کہ اس نے جو کچھ کیا وہ محض پیشہ وارانہ اصولوں کے مطابق کیا ہے۔ اخباری رپورٹ کے مطابق ایتھنز میں اسرائیل کے خلاف میچ میں شرکت کرنے والے ایک دوسرے کھلاڑی احسان حاج صفی کو بھی ایرانی سیاسی حلقوں اور حکومتی عہدیداروں کی طرف سے سنگین نتائج کی دھمکیاں دی گئی تھیں۔ انہوں نے اس میچ میں شرکت پر معافی مانگ لی ہے جس کے بعد اسے ٹیم میں بحال کر دیا گیا ہے۔ مبصرین کا کہنا ہے کہ ایران میں فٹبال ٹیم کے کپتان کو پاسداران انقلاب سے معافی مانگنے پر مجبور کرنا ریاست اور حکومت کا اسپورٹس کے امور میں کھلی مداخلت کا واضح ثبوت ہے۔

loading...