اشاعت کے باوقار 30 سال

مقروض قوموں کی عزت نہیں ہوتی

مقروض قوموں کی عزت نہیں ہوتی

اٹک: پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ مقروض قوموں کی عزت نہیں ہوتی پاکستان کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنا ہے، انسانیت کی خدمت کرنے والے قیادت اور کابینہ میں آئیں گے، قوم کی دولت لوٹنے والوں سے قوم نفرت انسانیت کے لئے عام کرنے والوں سے محبت کرتی ہے، تبدیلی آئی نہیں آ چکی ہے لوگ سمجھ گئے ہیں کہ ہمارے مسائل کرپشن کی وجہ سے ہیں، زرداری اور نواز کی سیاست ذاتی مفاد کی ہے اگر حکمرانوں نے نیب کو کمزور کرنے اور نااہل شخص کو پارٹی سربراہ بنانے کا قانون بنایا تو سڑکوں پر آئیں گے، اگلا دور تحریک انصاف کا ہے، اٹک میں جلسہ عام سے خطاب میں میجر طاہر صادیق کو تحریک انصاف میں شمولیت پر مبارک باد پیش کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ دنیا میں ایک طرف 29 لوگ ہیں جو اپنی ذات کے لئے جائیداد میں آتے ہیں 69 عوام کے نام پر اپنی دولت میں اضافہ کرتے ہیں لوگ انہیں بد دعائیں دیتے ہیں، دوسری طرف حق اور سچ اور انسانیت کی سیاست کرنے والے ہوتے ہیں، انسانیت کے لئے کام کرنے والوں کو دنیا یاد کرتی ہے، قائد اعظم نے اپنی ذات کے لئے نہیں قوم کو بنانے کے لئے جہدوجہد کی تھی انہیں قوم یاد کرتی ہے اور جب تک پاکستان قائم ہے یاد کرتی رہے گی، انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی قیادت اور کابینہ میں وہ لوگ ہوں گے جو غربت کے خاتمے اور انسانیت کے لئے کام کریں گے، ہم نے کبھی کسی کے سامنے قرضوں کے لئے کھلنا نہیں جو قرضے دیتا ہے وہ آزادی سے لیتا ہے، انہوں نے کہا کہ ہمیں امیران سے گیس ایل این جی سے سستی پڑ رہی تھی مگر ہمیں قرضے دینے والے ممالک نے ہمارے حکمرانوں کو اجازت نہیں دی ہم نے کسی اور کی نہیں اپنی قوم کی پرواہ کرنی ہے، ہماری پالیسی غربت کے خاتمے کے لئے ہو گی، انہوں نے کہا کہ جب کھلاڑی اپنے لیے کھلتے ہیں وہ ٹیم کبھی نہیں جیتتی زرداری اور شریف اپنے لیے کھیلتے ہیں اقتدار سے قبل ان کے اثاثے نہیں تھے میاں شریف ایک لوہار اور اسحاق ڈار کے والد سائیکلوں کی دکان کرتے تھے یہ بری بات نہیں مگر شریف برادران اور اسحاق ڈار نے قوم کی دولت لوٹی یہ برا ہے آج یہ اربوں پتی کیسے بن گئے، انہوں نے کہا کہ تبدیلی آنہیں رہی تبدیلی آ گئی ہے، عوام سمجھ گئے کہ کرپشن اور بے روزگاری، غربت کا کیا تعلق ہے، ملک کے مسائل کرپشن کی وجہ سے ہیں، انہوں نے کہا کہ اب یہ کہتے ہیں ہمارا احتساب عوام کرے گی عوام منشور کے مطابق ووٹ دیتی ہے، یہاں مجرم کو 40 گاڑیوں کا پروٹوکول دیا جا رہا ہے وزیر اعظم مجرم سے مشورے لیتا ہے، انہوں نے کہا کہ نواز شریف کہتے ہیں کہ کرپشن کو پکڑا تو ترقی رک جائے گی چین میں کرپشن کی سزا موت ہے چین میں 5 کروڑ سے زیادہ کی کوئی کرپشن کرے تو اسے سزائے موت دی جاتی ہے اگر کرپشن اتنا بڑا مسئلہ نہیں تو چین میں سزائے موت کیوں رکھی ہے اور چین ترقی کیوں کر رہا ہے، انہوں نے کہا کہ ڈیزل پر 50 فیصد ٹیکس ہے ڈیزل سب سے زیادہ استعمال ہوتا ہے 9 سال قبل اور آج کا موازنہ کریں تو آج ایک ہزار کی کوئی ویلیو نہیں کرپشن سے قوم غریب اور ایک جھوٹا طبقہ امیر ہو جاتا ہے، انہوں نے کہا کہ دینا میں کسی بھی جگہ مجرم کو پارٹی کا صدر بنانے کا قانون نہیں اگر انہوں نے نیب کو کمزور کرنے اور چور کو سربراہ بنانے کا قانون بنایا تو عوام وعدہ کریں کہ میرے ساتھ سڑکوں پر نکلیں گے، انہوں نے کہا کہ کرپٹ خاندان کو بچانے کے لئے یہ عدلیہ اور فوج پر حملے کر رہے ہیں، شریف مافیا ججوں سے مرضی کے فیصلے کرواتے تھے آج ہماری عدلیہ نے میرٹ پر فیصلہ کیا بھی عدلیہ کا قصور ہے اور فوج کا قصور یہ ہے کہ جنرل ضیاء اور بے نظیر کی حکومت گرانے کی طرح ان کی مدد نہیں کی، انہوں نے کہا کہ دوسری کنگ عظیم میں تباہ ہونے والے جرمنی اور جاپان نے عوام پر پیسہ خرچ کر کے ترقی کی ہم نے اپنے عوام کو مہارت دینی ہے، ہم نے نوجوانوں کو بہتر تعلیم اور روزگار دیں گے، انہوں نے کہا کہ ہم نے گورننس کو بہتر کرنا ہے ادارے مضبوط کرنے ہیں اور سرمایہ کاری لے کر آنی ہے، بیرون ملک پاکستانی اپنا پیسہ یہاں لے آئیں تو بے روزگاری ختم ہو گی اور بیرون ممالک کے لوگ یہاں نوکریاں کرنے آئیں گے، انہوں نے کہا کہ پاکستان خطے میں اہم حیثیت رکھتا ہے، ہم سرمایہ کاری کر کے اقتصادی راہداری سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں، انہوں نے کہا کہ سال کے اس ماہ میں کبھی دھند نہیں آئی آج ماحولیاتی آلودگی کی وجہ سے دھند ہے ہم نے ایک ارب درخت لگا کر 40 چھانگا مانگا جیسے جنگل اگائے ہیں، ہم پہلی بار ماحولیات کی پالیسی دے رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ حکومت نام کی ملک میں کوئی چیز نہیں ملک کے حالات برے ہیں ہم جمہوری عمل کے تحت جلد انتخابات کا مطالبہ کرتے ہیں، انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب غائب ہے جس نے کہا تھا کہ لوڈشیڈنگ ختم نہ کی تو نام بدل دیں آج بجلی نہیں مل رہی اگلا اور تحریک انصاف کا ہے۔

loading...