اشاعت کے باوقار 30 سال

بی ایس ایف کیمپ پر فدائین حملہ

بی ایس ایف کیمپ پر فدائین حملہ

سری نگر ۔ جموں و کشمیر کے گرمائی دارالحکومت سری نگر کے مضافاتی علاقہ ہمہامہ میں بین اقوامی ہوائی اڈے کے نزدیک واقع 182 بٹالین بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف) کیمپ پر 4 جنگجوؤں پر مشتمل ایک گروپ نے فدائین حملہ کر دیا ہے۔ جنگجوؤں نے منگل کی علی الصبح قریب 4 بجے کیمپ کے اندر داخل ہونے میں کامیابی حاصل کی۔ تازہ ترین اطلاعات کے مطابق طرفین کے مابین شدید گولہ باری میں تاحال ایک جنگجو ہلاک جب کہ بی ایس ایف کے 3 اہل کار زخمی ہو گئے ہیں۔ احتیاطی اقدامات کے طور پر ائرپورٹ کی طرف جانے والی تمام سڑکوں کو بند جب کہ ائرپورٹ پر پروازوں کی آوا جاہی معطل کردی گئی ہے۔ سیکورٹی عہدیداروں نے ائرپورٹ پر پروازوں کی آمد و رفت کی بحالی کے سلسلے میں دن کے گیارہ بجے ایک سیکورٹی جائزہ میٹنگ منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ کیمپ کے اندر طرفین کے درمیان گولہ باری کا تبادلہ وقفے وقفے سے جاری ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آپریشن کی مانیٹرنگ کے لئے سینئر سیکورٹی عہدیدار از خود وہاں موجود ہیں۔ ذرائع نے بتایا ’کیمپ کے باب الداخلی کے نذدیک ایک لاش پڑی ہوئی ہے۔ یہ لاش ظاہری طور پر فدائین حملہ آور کی ہے۔ چونکہ گولہ باری کا تبادلہ جاری ہے، اس لئے لاش کو برآمد نہیں کیا جا سکتا ہے‘۔ سیکورٹی ذرائع نے بتایا کہ بھاری مسلح جنگجوؤں کے ایک گروپ نے منگل کی علی الصبح قریب چار بجے ہمہامہ میں 182 بٹالین بی ایس ایف کیمپ میں داخل ہونے کے لئے گرینیڈ پھینکے اور بعدازاں اندھا دھند فائرنگ شروع کر دی۔ اس کے بعد حملہ آور کیمپ کے اندر داخل ہونے کے بعد احاطے میں واقع انتظامی بلڈنگ میں داخل ہوئے۔ خبر کے مطابق، بی ایس ایف کے کیمپ کے اندر ایڈمنسٹریشن بلاک میں دو جنگجووں کے چھپے ہونے کا اندیشہ ہے۔ انہوں نے بتایا ’حملہ آوروں کی ابتدائی فائرنگ کے نتیجے میں بی ایس ایف کے تین جوان زخمی ہو گئے جنہیں علاج و معالجہ کے لئے اسپتال منتقل کیا گیا ہے‘۔ انہوں نے بتایا ’حملہ آور جنگجو کیمپ کے نزدیک ایک عمارت میں داخل ہوئے۔ شدید فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے‘۔ ذرائع نے بتایا کہ حملہ آور جنگجوؤں کو ہلاک کرنے کے لئے شروع کردہ آپریشن میں ریاستی پولیس، فوج اور سی آر پی ایف کے اہل کار مشترکہ طور پر حصہ لے رہے ہیں۔

loading...