اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

معمر قذافی کو ہلاک کر دیا گیا

بھارتی جمہوری سیکولر ہونے کے دعوہ پر ایک اور دھبہ

بھارتی جمہوری سیکولر ہونے کے دعوہ پر ایک اور دھبہ

نئی دہلی: بھارتی ریاست گجرات میں نچلی ذات سے تعلق رکھنے والے ایک دلت شخص کو روایتی ہندو رقص دیکھنے پر اونچی ذات سے تعلق رکھنے والے چند افراد نے قتل کر دیا۔ 21 سالہ جیش سولانکی اور ان کے کزن پرکاش پر اتوار (یکم اکتوبر) کو اس وقت حملہ کیا گیا جب وہ 9 روزہ ہندو فیسٹیول نورتری کے دوران منعقد ہونے والے گربہ ڈانس کو دیکھنے گئے۔ مقامی پولیس سپرنٹنڈنٹ آنند سورابھ نے اے ایف پی کو بتایا، 'جیش سولانکی کے قتل کے الزام میں 8 افراد کو گرفتار کر لیا گیا'۔ پولیس کے مطابق انہیں مقتول کے کزن پرکاش کی جانب سے شکایت موصول ہوئی، جس میں انہوں نے بتایا کہ 'اونچی ذات سے تعلق رکھنے والے ایک شخص نے ان سے پوچھا کہ وہ یہ ڈانس پرفارمنس کیوں دیکھ رہے ہیں، جس کے بعد اس نے کچھ نازیبا الفاظ ادا کیے اور پھر 7 دیگر افراد کے ہمراہ ان دونوں پر تشدد کرنا شروع کر دیا'۔ پولیس کے مطابق، 'مذکورہ افراد نے پہلے پرکاش کو تھپڑ مارا اور جب جیش نے لڑائی روکنے کی کوشش کی تو اسے اتنی زور سے دھکا دیا گیا کہ اس کا سر دیوار سے ٹکرایا اور وہ نیچے جا گرا، جیش کو فوری طور پر ہستال لے جایا گیا، جہاں ڈاکٹروں نے اس کی موت کی تصدیق کر دی'۔ 'حملہ آوروں کا کہنا تھا کہ دلتوں کو گربہ ڈانس دیکھنے کا کوئی حق نہیں ہے'۔ خیال رہے کہ دلت جنھیں عام طور پر 'اچھوت' تصور کیا جاتا ہے عام طور پر ہندوستان میں مردہ جانوروں کی باقیات اٹھانے کا کام کرتے ہیں۔ ہندوستان میں دلتوں پر بڑھتے ہوئے واقعات کے بعد ملک کے وزیراعظم نریندر مودی نے گذشتہ دنوں ملک میں دلتوں پر حملوں کو بند کرنے پر زور دیا تھا۔