اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

جونز ٹاؤن میں اجتماعی خود کشی

ملیحہ لودھی نے اقوام متحدہ میں پاکستان کو شرمندہ کر دیا

ملیحہ لودھی نے اقوام متحدہ میں پاکستان کو شرمندہ کر دیا

نیویارک: اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج کو کرارا جواب تو دے دیا لیکن ملیحہ لودھی نے اپنی تقریر کے دوران کشمیر میں بھارتی ظلم کی داستان سناتے ہوئے حوالے کے طور پر جو کشمیر ی لڑکی کی تصویر شیئر کی در حقیقت وہ تصویر فلسطینی لڑکی کی نکلی جس پر پاکستان کو پوری دنیا کے سامنے شرمندی گی کا سامنا کرنا پڑ گیا جبکہ بھارتی میڈیا نے بھی اس تصویر کو بنیاد بنا کر پاکستان کے خلاف طرح طرح کی باتیں بنانا شروع کر دی ہیں۔ تفصیل کے مطابق اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج کی تقریر کے جواب میں خطاب کرتے ہوئے ملیحہ لودھی نے کہا کہ بھارت جنوبی ایشیا میں دہشت گردی کی ماں ہے، کلبھوشن یادیو نے پاکستان میں دہشت گردی کا اعتراف کیا، بھارت میں کوئی بھی اقلیت محفوظ نہیں، بھارت دہشت گردی کو ریاستی ہتھکنڈے کے طور پر استعمال کرتا ہے۔ اس موقع پر انہوں نے کشمیر میں بھارتی جارحیت کے حوالے سے بھی بات کی اور کہا کہ کشمیر بھارتی حصہ نہیں، وہاں پر بھارتی قبضہ ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کشمیر میں بھارتی جرائم کی تحقیقات ہونی چاہیے اور فریقین تنازعہ حل نہ کر سکیں تو اقوام متحدہ اور عالمی برادری مداخلت کی پابند ہے۔ اس دوران انہوں نے کشمیر میں بھارتی مظالم کے حوالے سے ایک لڑکی کی تصویر بھی دکھائی جس کے منہ پر زخموں کے نشان تھے، ملیحہ لودھی نے کہا کہ یہ ہے سب سے بڑی جمہوریت کا اصل چہرہ۔ جنرل اسمبلی کے اجلاس میں حوالے کے طور پر ملیحہ لودھی نے جس لڑکی کی تصویر دکھائی وہ در حقیقت کشمیر نہیں بلکہ فلسطین سے تعلق رکھتی تھی، رویا ابو جوم نامی 17 سالہ اس لڑکی کا تعلق غزہ سے ہے جو کہ اسرائیلی فضائیہ کے حملے میں زخمی ہوئی تھی۔ یہ تصویر مشہور فوٹو گرافر جرنلسٹ ہیدی لیوائن نے 2014 میں غزہ جنگ کے دوران لی تھی۔ امریکی فوٹو گرافر ہیدی لیوائن کو غزہ جنگ کے دوران یہ تصاویر لینے پر انٹرنیشنل وویمنز میڈیا فاﺅنڈیشن کی جانب سے ایوارڈ سے بھی نوازا گیا۔ جنرل اسمبلی کے اجلاس میں پاکستان کی جانب سے اس تصویر کے دکھائے جانے پر بھارتی میڈیا نے بھی خوب واویلا مچا رکھا ہے اور بھارتی میڈیا پاکستان کے خلاف طرح طرح کی باتیں کر رہا ہے۔

loading...