اشاعت کے باوقار 30 سال

بیرون ملک سے میڈیکل کرنے والے طلبہ کے لئے ہاؤس جاب پر پابندی

بیرون ملک سے میڈیکل کرنے والے طلبہ کے لئے ہاؤس جاب پر پابندی

اسلام آباد: پی ایم ڈی سی نے بیرون ملک میڈیکل تعلیم حاصل کرنے وا لے طلبہ پر پاکستان کے سرکاری و نجی ہسپتالوں میں ہاؤس جاب پر پابندی عائد کر دی ہے۔ پی ایم ڈی سی کے قائم مقام رجسٹرار کی جانب سے جاری کردہ احکامات کے مطابق ایسے طلبہ ایک سال کی لازمی کلینکل انٹرن شپ (ہاؤس جاب) اسی ملک کے ہسپتالوں میں کریں گے۔ انٹرن شپ نہ کرنے والوں کی پی ایم ڈی سی میں بطور ڈاکٹر رجسٹریشن نہیں کی جائے گی۔ یکم اپریل 2017 سے قبل انٹرن شپ کرنے والے طلبہ پر پابندی کا اطلاق نہیں ہو گا۔ بیرون ملک سے ایم بی بی ایس کی ڈگری حاصل کرنے والے طلبہ کی پی ایم ڈی سی میں بطور ڈاکٹر رجسٹریشن کے لئے ساڑھے پانچ سال کی تعلیمی مدت پوری کرنا لازمی ہو گی اور نیشنل ایگزیمینیشن بورڈ کا امتحا ن پاس کرنا ہو گا۔ پی ایم ڈی سی کے صدر پروفیسر ڈاکٹر شبیر احمد نے "نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پابندی کی وجہ بیرون ممالک کی جانب سے طلبہ کو اپنے ہسپتالوں میں ہاؤس جاب کی اجازت نہ دینے کی شرط ہے۔ بیرون ملک میڈیکل کالجز لاکھوں روپے لے کر ڈگری دے رہے ہیں مگر ہاؤس جاب کے لئے طلبہ کو پاکستان بھجوا دیتے ہیں۔ یہ طریقہ درست نہیں، بیرون ممالک کے میڈیکل کالجز کو ہاؤس جاب کا وظیفہ دینا چاہئے۔

loading...