اشاعت کے باوقار 30 سال

بھارت کا روہنگیا مسلمانوں کے خلاف نیا پروپیگنڈہ

بھارت کا روہنگیا مسلمانوں کے خلاف نیا پروپیگنڈہ

نئی دہلی: بھارت نے اپنے ہاں پناہ گزیں روہنگیا مسلمانوں کو بے دخل کرنے کے لیے انہیں پاکستانی ایجنسی اور شدت پسند تنظیم داعش کا ایجنٹ قرار دے دیا۔ بھارتی میڈیا کے مطابق نئی دہلی سرکار نے سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے جواب میں روہنگیا مسلمانوں کو ملک کی قومی سلامتی کے لیے سنگین خطرہ قرار دیا۔ روہنگیا مسلمانوں کی بھارت سے بے دخلی کے خلاف بھارتی سپریم کورٹ میں دو روہنگیا تارک وطن کی دائر کردہ درخواستوں کی سماعت ہوئی۔ درخواست گزاروں نے بھارت سے اپنی دخلی کو بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی قرار دیا۔ بھارت کی مرکزی حکومت نے عدالت میں جمع کرائے گئے اپنے جواب میں کہا کہ بعض روہنگیا مسلمانوں کے پاکستانی خفیہ ایجنسی اور شدت پسند تنظیم داعش کے ساتھ تعلقات ہیں جس کی وجہ سے وہ بھارت کی قومی سلامتی کے لیے سنگین خطرہ ہیں، نئی دہلی سمیت مختلف شہروں میں عسکریت پسند روہنگیا سرگرم ہیں، لہذا عدالت انہیں ملک بدر کرنے سے حکومت کو نہ روکے، کیونکہ ان کے یہاں ٹھہرنے سے بھارتی شہریوں کے بنیادی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہوتی ہے۔ واضح رہے کہ بھارت میں تقریبا 40 ہزار سے زائد روہنگیا مسلمان کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں، جب کہ گزشتہ دنوں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن نے روہنگیا مسلمانوں کی بے دخلی پر بھارت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔