اشاعت کے باوقار 30 سال

پاکستانی فن کاروں سے متعلق اجے دیوگن کا دوغلا پن

پاکستانی فن کاروں سے متعلق اجے دیوگن کا دوغلا پن

ممبئی: گزشتہ برس مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے ہیڈ کوارٹر پر حملے کے بعد بھارت میں پاکستانی فن کاروں کے خلاف نفرت کی لہر ابھری تھی جس میں اجے دیوگن بھی پیش پیش تھے تاہم اب انہوں نے یو ٹرن لیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستانی فن کاروں کو بھارت میں آ کر کام کرنا چاہئے۔
بالی ووڈ کے معروف اداکار اجے دیوگن کا شمار بھارتی فلم انڈسٹری کے صف اول کے اداکاروں میں ہوتا ہے۔ گزشتہ برس اجے دیوگن نے مقبوضہ کشمیر میں اڑی کیمپ پر ہونے والے حملے پر مسلمانوں اور پاکستانی فن کاروں کے خلاف زہر اگلا تھا تاکہ ان کی فلم ’’شیوے‘‘ کو ’’اے دل ہے مشکل ‘‘ کے مقابلے میں زیادہ پذیرائی ملے۔ انہوں نے کہا تھا کہ کرن جوہر کو اپنی فلم ’’اے دل ہے مشکل‘‘ میں پاکستانی اداکار فواد خان کو کاسٹ نہیں کرنا چاہئے تھا۔ اگر ان سے یہ غلطی ہو ہی گئی ہے تو انہیں فوراً فواد خان کو فلم سے نکال کر اپنی غلطی کو سدھار لینا چاہئے۔ انہوں نے پاکستانی فن کاروں سے اپنی نفرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ مستقبل میں کبھی بھی پاکستانی فن کاروں کے ساتھ کام کرنا نہیں چاہیں گے۔
حال ہی میں اجے دیوگن نے یوٹرن لیتے ہوئے کہا ہے کہ پڑوسی ملک سے ہمارے تعلقات ابھی تک کشیدہ ہیں لیکن حقیقت تو یہ ہے کہ لوگ اب بھی پاکستانی فن کاروں کے ساتھ کام کرنا چاہتے ہیں لہٰذا یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ ہماری انڈسٹری میں منافقت کا راج ہے۔ اجے دیوگن کے اس دوغلے پن سے فن کاروں سمیت پورا بھارتی میڈیا حیرانی کا شکار ہے تاہم اجے کا یہ بیان اس وقت سامنے آیا ہے جب ان کی فلم ’’بادشاہو‘‘ریلیز کے لئے تیار ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اجے دیوگن کو اچانک پاکستانی فن کاروں سے اس لیے محبت ہو گئی ہے کیونکہ وہ اپنی فلم بادشاہو کی ریلیز کے وقت کسی قسم کی کوئی پریشانی نہیں چاہتے اور ان کی خواہش ہے کہ بادشاہو پاکستانی سینما گھروں میں بھی نمائش کے لیے پیش ہو۔ کیونکہ پاکستان بھی بالی ووڈ کی بڑی مارکیٹ ہے۔

loading...