اشاعت کے باوقار 30 سال

عبیدی کی معلومات افشاں کرنے پر برطانیہ امریکہ سے ناراض

لندن: برطانیہ کی وزیرِ داخلہ امبر رڈ نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے مانچیسٹر میں خودکش حملہ کرنے والے شدت پسند سلمان عبیدی کے بارے میں برطانیہ سے پہلے معلومات ظاہر کرنے پر انھیں غصہ آیا ہے۔ امبر رڈ نے کہا کہ برطانیہ تجسس کے عنصر کو برقرار رکھنے کے لیے معلومات کی ترسیل کو اپنے کنٹرول میں رکھنا چاہتا تھا۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے وزیرِ داخلہ نے کہا کہ انہوں نے امریکہ سے کہہ دیا ہے کہ ایسا دوبارہ نہیں ہونا چاہیے۔ امبر رڈ کہہ چکی ہیں کہ مانچسٹر میں پیدا ہونے والا سلمان عبیدی برطانوی سکیورٹی ادروں کی نظروں میں تھا۔ برطانوی حکام کے مطابق مشتبہ خود کش حملہ آور کے والدین کا تعلق لیبیا سے ہے۔ انسداد دہشتگردی کے اہلکار اِس بات کی نشاندہی کر چکے ہیں کہ مشتبہ لوگوں کے نام وقت سے پہلے میڈیا میں نہ آنا کبھی کبھی ان کے لیے کتنا اہم ہوتا ہے۔ ان کے مطابق زیرِ تفتیش شخص کا نام 36 گھنٹے تک میڈیا میں نہ آنے سے تحقیقات میں مدد ملتی ہے اور اس سے پہلے کہ مشتبہ شخص کے ساتھیوں کو یہ احساس ہو کہ پولیس انھیں ڈھونڈ رہی ہے انھیں گرفتار کیا جا سکتا ہے۔ مانچسٹر کے حملہ آور کے بارے میں معلومات سب سے پہلے امریکہ میں سامنے آئیں اور امبر رڈ نے کہا کہ وہ اس بات کی تحقیق کریں گی کہ اداروں کے درمیان معلومات کے تبادلے کی وجہ سے کس طرح وقت سے پہلے یہ معلومات منظر عام پر آ گئیں جبکہ برطانوی پولیس اور سکیورٹی ادارے نہیں چاہتے تھے کہ یہ عوام کے سامنے آئیں۔ انھوں نے کہا کہ برطانوی پولیس کا موقف بالکل واضح رہا ہے کہ وہ اپنے تحقیقاتی عمل کے تحفظ کے لیے معلومات کی ترسیل اپنی مرضی سے کرنا چاہتی ہے۔ 'لہذا اگر معلومات دوسرے ذرائع سے باہر آ جائیں تو یہ غصے والی بات ہے۔ اسی لیے میں نے اپنے دوستوں سے کہہ دیا ہے کہ ایسا دوبارہ نہیں ہونا چاہیے۔'

'Irritating': UK Scolds U.S. Officials Who Leaked Name of Manchester ...
loading...