اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

نواز شریف کے استعفی تک جے آئی ٹی اپنا کام نہیں کر سکتی

نواز شریف کے استعفی تک جے آئی ٹی اپنا کام نہیں کر سکتی

اسلام آباد: تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا کہ نواز شریف پوری قوم کے سامنے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے ۔ سپریم کورٹ نے تسلیم کیا ہے کہ ادارے مفلوج ہیں جب تک وزیر اعظم نواز شریف استعفیٰ نہیں دیتے اس وقت تک جے آئی ٹی اپنا کام نہیں کر سکتی ہے ۔ عمران خان نے جمعہ کو اسلام آباد میں جلسے کا اعلان قوم کوسڑکوں پر آنے کا پیغام دے دیا ۔ ان خیالات کا اظہار تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔عمران خان نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کی تاریخ میں کبھی بھی موجودہ حکومت پر ایسے ریمارکس نہیں آئے جو کہ گزشتہ روز ملک کی اعلی عدالت کے سینئر ججز نے دئے ہیں آخر اب نواز شریف اور اس کے چیلے کس منہ سے عوام کے پاس ووٹ مانگنے جائیں گے ۔ عمران خان نے کہا کہ میں سپریم کورٹ میں درخواست گزار تھا مجھے آج پارلیمنٹ میں بولنے دیا جاتا لیکن مجھے بات کرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔ برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون بھاری اکثریت سے کامیاب ہوا تھا لیکن اس نے اخلاقی طور پر اپنا استعفیٰ دیا اسے جمہوریت کہتے ہیں اس وقت ملک کے مستقبل کے چیف جسٹسوں نے نواز شریف کو نا اہل قرار دیا ہے اور ملک کے اہم ترین پانچ ججز نے نواز شریف کے تمام ردی کو مسترد کیا ہے اور قطری خط کو ردی کی ٹوکری میں پھینک دیا ۔ تحریک انصاف کے 12 پوائنٹس پر سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی بنائی ہے لیکن پاکستان میں تمام انصاف کے ادارے مفلوج ہو چکے ہیں کیونکہ یہ تمام ادارے تو وزیر اعظم نواز شریف کے ماتحت ہیں اور آخر یہ ادارے پھر نواز کے خلاف کیسے کارروائی کریں گے جب کہ نیب کے سربراہ نے واضح عدالت میں کہا کہ ہم نواز شریف کے خلاف کارروائی نہیں کر سکتے ہیں پھر اس کے بعد کوئی چیز باقی رہ جاتی ہے اور سپریم کورٹ نے خود ہی تسلیم کیا ہے کہ ادارے مفلوج ہو چکے ہیں ایک سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ ملک کا وزیر اعظم اخلاقی طور پر ملک کو چلاتا ہے اور حکمرانی کرتا ہے ناکہ اس کے ہاتھوں میں بندوقیں ہوتی ہیں جنوبی کوریا میں عوام سڑکوں پر نکل کر آئی اور اپنا وزیر اعظم بنوایا ۔ انہوں نے کہا کہ آخر مسلم لیگ(ن) نے گزشتہ روز کس چیز کی مٹھائیاں بانٹی ہیں آخر کچھ شرم آنی چاہئے ۔ ملک کے نامور دو ججز نے نواز شریف کو جھوٹا اور بے ایمان قرار دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قومیں اخلاقیات کے طور پر چلتی ہیں لیکن مسلم لیگ(ن) حکمران جماعت نے ہماری اخلاقیات ہی تباہ کر دی ہیں ۔ قائد اعظم انگریزی میں تقریر کرتے تھے لیکن عوام کو سمجھ نہ آنے کے باوجود بھی اس پر یقین کرتے تھے کیونکہ وہ سچ بولتے تھے ۔ عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف ہمیشہ اپوزیشن کو اکٹھا لے کر چلی ہے اور وزیر اعظم کے استعفیٰ پر بھی تمام اپوزیشن کا مشترکہ ردعمل تھا ۔ مریم نواز کے سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ مریم نواز نیلسن اور نیسکون کی بینیفشری ہیں اس کی بھی جے آئی ٹی میں تحقیقات ہوں گی ۔ عمران خان نے کہا کہ ہمیں جے آئی ٹی پر تحفظات ہیں اس پر میٹنگ کر کے جے آئی ٹی کے حوالے سے دوبارہ سپریم کورٹ جائیں گے کیونکہ اعلیٰ عدالت نے خود اداروں کے مفلوج ہونے کو تسلیم کیا ہے یہ پیسے کوئی ہمارے ذاتی نہیں بلکہ قوم کے ہیں جن سے ملک اربوں روپے کا مقروض ہو رہا ہے ہر سال 10 ارب ڈالر کی پاکستان سے منی لانڈرنگ ہوتی ہے جب کہ عمران خان نے جمعہ کے روز اسلام آباد میں جلسے کا اعلان کرتے ہوئے عوام کو سڑکوں پر آنے کی دعوت دے دی اور کہا کہ قوم ایسے جے ٹی آئی کو نہیں مانتی ہے جو کہ وزیر اعظم کے نیچے کام کرے اور وزیر اعظم ملک بھر میں چوری کرتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے ۔