اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

ای سی بی کے چیئرمین کی عمران خان کے بیان پر تنقید

ای سی بی کے چیئرمین کی عمران خان کے بیان پر تنقید

انگلش کرکٹ بورڈ (ای سی بی) کے سربراہ کولن گریویز نے پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان عمران خان کے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے فائنل کے لیے لاہور آنے والے کھلاڑیوں کو 'پھٹیچر' کے بیان پر تنقید کرتے ہوئے اس کو ہتک آمیز قرار دے دیا ہے۔ ای سی بی کے چیئرمین کولن گریویز کا کہنا تھا کہ 'ڈیرن سیمی، ڈیوڈ ملان اور دیگر کھلاڑیوں کے خلاف اس طرح کا بیان ہتک آمیز ہے اور وہ اس طرح کے متعصبانہ بیانات کے مستحق نہیں تھے۔ خیال رہے کہ عمران خان نے رواں ماہ کے اوائل میں قذافی اسٹیڈیم لاہور میں پی ایس ایل کے فائنل پر تنقید کرتے ہوئے شرکت کے لیے آنے والے غیرملکی کھلاڑیوں کو پھٹیچر کہا تھا۔ سابق کپتان کا کہنا تھا کہ 'ان کھلاڑیوں کو میں نہیں جانتا اور ان کے آنے سے پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی میں کوئی فرق نہیں پڑےگا'۔ ان کا کہنا تھا کہ' ایسا لگتا ہے کہ ہمیں دکھانے کے لیے انھیں اِدھر اٗدھر سے اور کسی کو افریقہ سے پکڑ کر لایا گیا ہے لیکن ہم نہیں جانتے ہیں کہ یہ کون لوگ ہیں'۔ بعد ازاں عمران خان نے وضاحت کرتے ہوئے کہا تھا کہ ان میں سے کوئی بھی کھلاڑی اپنے ملک کے لیے ٹیسٹ نہیں کھیل رہا ہے کیونکہ ٹیسٹ کرکٹ ہی اصل کرکٹ ہے اس لیے میں انھیں وہ درجہ نہیں دیتا۔ پی ایس ایل کے فائنل کے لیے لاہور آنے والے کھلاڑیوں میں ویسٹ انڈیز کے ٹی ٹوئنٹی چمپیئن کپتان ڈیرن سیمی اور مارلن سیمیولز کے علاوہ انگلینڈ کے ڈیوڈ ملان اور کرس جارڈن شامل تھے جبکہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی ٹیم میں دیگر پانچ کھلاڑی بھی شامل ہوئے تھے۔ کولن گریویز نے کہا کہ عمران خان کے خیالات'کھلاڑیوں کے حوالے سے ہتک آمیز تھے اور میرا نہیں خیال کہ ڈیوڈ ملان اور ڈیرن سیمی کو تیسرے درجے کے کرکٹرز قرار دیا جائے گا'۔ ای سی بی کے چیئرمین نے بین الاقوامی کھلاڑیوں کا بھرپور دفاع کرتے ہوئے کہا کہ 'ڈیوڈ ملان کی انگلش ٹیم میں بڑی اہمیت ہے جبکہ ڈیرن سیمی نے کپتان کی حیثیت سے ویسٹ انڈیز کو دو مرتبہ ٹی ٹوئنٹی چمپیئن بنایا ہے'۔ ان کا کہنا تھا کہ 'خاص کر ڈیوڈ ملان مڈل سیکس کی ایک روزہ ٹیم کے سرفہرست کھلاڑیوں میں شمار ہوتے ہیں اور انھوں نے بہترین کارکردگی دکھائی ہے'۔ انگلش کرکٹ بورڈ کے چیئرمین نے پاکستان جا کر کھیلنے کا فیصلہ کرنے والے کھلاڑیوں پر تنقید کے بجائے ان کا احترام اور سراہنے کے حق دار قرار دیتے ہوئے کہا کہ 'اس طرح کے کھلاڑیوں کو بے عزت نہیں کرسکتے میرے خیال میں انھیں احترام نہ دینا مکمل طور پر غلط ہے'۔ 'انھوں نے پاکستان آکر کھیلنے کا فیصلہ کیا جو شاندار تھا اور اس میں کوئی شک نہیں کہ انھیں بہت زیادہ عزت مل چکی ہے'۔ لاہور میں پی ایس ایل کے فائنل کے فیصلے کو درست قرار دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ'بین الاقوامی کرکٹ میں ہم اس بات پر خوش ہیں کہ پی ایس ایل کا فائنل لاہور میں اچھی طرح ہوا اور ہر کوئی خوش تھا کہ یہ کوئی ناخوش گوار واقعہ ہوئے بغیر منعقد ہوا'۔ کولن گریویز نے کہا کہ ای سی بی نے پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی کی برسوں سے حمایت کی ہے اور اب بھی کررہے ہیں ہم وہ ہیں جس نے آئی سی سی پر زور دیا کہ پاکستان کے تعاون کے لیے سیکیورٹی سمیت جو کچھ کرسکتے ہیں وہ کرگزریں۔ یاد رہے کہ انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ کے سربراہ جائلز کلارک نے پی ایس ایل کے فائنل کو ہر صورت میں لاہور میں کرانے کی حمایت کی تھی اور لاہور کو دنیا کے محفوظ ترین شہروں میں سے ایک قرار دیا تھا۔

English Cricket Board (ECB chief B) Colin gryuyz said that while criticizing the statement Lahore incoming players for the final of the Pakistan Super League, former captain Imran Khan's Pakistan Cricket Board (PSL) 'hot rod' declared defamatory. ECB's ch