اشاعت کے باوقار 30 سال

نانا نے 14 سالہ نواسی کو فروخت کر دیا

  نانا  نے  14 سالہ نواسی کو فروخت کر دیا

لاہور: بیمار نانی کی عیادت کے لئے جانے والی 14 سالہ نواسی کو اس کے نانا حنیف نے مبینہ طور پر 5 لاکھ میں فروخت کر دیا، فاروق نامی شخص کے ہاتھ فروخت ہونے والی متاثرہ لڑکی سدرہ اس کے چنگل سے ایک ماہ بعد موقع پا کر فرار ہونے کے بعد پولیس کی جانب سے داد رسی نہ ہونے پر اپنی والدہ کے ہمراہ انصاف کے لئے سیشن عدالت پہنچ گئی ۔
ایڈیشنل سیشن جج عرفان انجم کی عدالت میں مصطفی آباد کی رہائشی 14 سالہ سدرہ گزشتہ روز اپنی والدہ نیلم بی بی کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئی جہاں پر اس نے موقف اختیار کیا کہ اس کے والد نے اسے بیمار نانی کی تیمارداری کے لئے بھجوایا تھا، جہاں پر نانا حنیف نے مبینہ طور پر رقم کے لالچ میں اسے فاروق نامی شخص کے ہاتھ 5 لاکھ روپے میں فروخت کر دیا تاہم وہ ایک ماہ بعد وہاں سے موقع پا کر فرار ہونے میں کامیاب ہوئی، متاثرہ لڑکی نے مزید کہا کہ نانا تو نواسیوں کے سر پر ہاتھ رکھتے ہیں، مگر میرا ہی نانا میرا سوداگر نکلا، متاثرہ لڑکی کی والدہ نیلم بی بی کا کہنا تھا کہ وہ اپنے باپ حنیف کا منہ نہیں دیکھنا چاہتی، نواسی کی زندگی برباد کرنے والے ایسے نانا کو سزا ملنی چاہیے اور اس کے لئے ا س کو وزیر اعلی کے پاس بھی جانا پڑا تو جائے گی تاہم عدالت سے استدعا ہے کہ قانون کے مطابق کارروائی کا حکم دیا جائے۔ فاضل جج نے متاثرہ لڑکی کے بیان کے بعد مصطفی آباد پولیس سے آئندہ سماعت پر رپورٹ طلب کر لی ہے ۔