اشاعت کے باوقار 30 سال

آج کا دن تاریخ میں

سید عبدالستار مفتی میموریل گولڈن جوبلی عالمی ریڈیو مشاعرہ

بانی ء تقدیس ادب سید ایاز مفتی کی زیرِ صدارت
سید عبدالستار مفتی میموریل گولڈن جوبلی عالمی ریڈیو مشاعرہ
دنیا بھر سے شعراء کی کثیر تعداد نے شرکت کی
رپورٹ: نیر صدیقی

انتیس مئی دوہزار سولہ کو پاکستان کے معروف شاعر اور انجمن تقدیس ِ ادب کے روحانی سرپرست حضرتِ سید عبدالستار مفتی علیہ رحمہ سے منسوب طرحی آن لائن شاعری کا فورم جسے دنیا سید عبدالستار مفتی میموریل عالمی فی البدیہہ طرحی مشاعرہ فورم کے نام سے جانتی ہے۔ کی جانب سے ٥٠ مشاعروں کی تکمیل پر گولڈن جوبلی عالمگیر ریڈیو مشاعرہ کا اہتمام کیا گیا۔ جس میں تمام دنیا سے شعراء نے شرکت کی۔ جس میں اسی فورم میں کہی گئی غزلیات پیش کی گئیں۔ جس میں دنیا کے جید اور مستند شعرا ء کو دعوت ِ سخن دی گئی۔ اس مشاعرے کی صدارت انجمن تقدیس ِ ادب کے بانی اور اس فورم کے چئیرمین جناب سید ایاز مفتی نے کی اور ہندوستان (دہلی) کے معروف اور عالمی شہرت یافتہ شاعر جناب ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی مہمانِ خصوصی تھے۔ نظامت شاعرِ جمال جناب الطاف بخاری نے کی۔ اور الطاف بخاری اپنے برجستہ جملوں سے اسے کمال حسن وخوبی سے نبھاتے رہے۔

محفل کی بسم اللہ ہیوسٹن ریڈیو کی روح ِ رواں آر جے پوجا شِو شنکر نے تلاوت اور حمد ِ باری تعالی سے کی۔ اسکے بعد نعت ِ رسول مقبول ۖ کے لئے پاکستان کی ایک ہردلعزیز اور انجمن ِ طلباء اسلام کے رہبر اور المصطفی ویلفئیر ٹرسٹ کے سربراہ جناب ڈاکٹر ظفر اقبال نوری نے پیش کی۔ منقبت کے لئے اسلام آباد پاکستان کے بلال رشید جنہیں شاعرِ اہلِ عترت بھی کہا جاتا ہے سے ٹیلیفونک رابطہ کیا گیا اور انہوں نے مولا علی کرم اللہ وجہہ الکریم کی شان میں مفتی ء مرحوم کے مصرعہ ء طرح پر کہی ہوئی اپنی منقبت پیش کرنے کا اعزاز ِ حسیں حاصل کیا۔ اپنی علالت کے باوجود انہوں نے اس میں شرکت کی۔ اس موقع پر ناظم ِ مشاعرہ جناب الطاف بخاری نے مفتی ء مرحوم کے پچاسویں مشاعرہ میں دئیے گئے مصرعہ ء طرح ِ ۔ ٹھوکریں کھانے سے پہلے تجربہ ہوتا نہیں۔ سے پیدا ہونے والی اپنی شعری کیفیت کے بارے میں بتایا۔ اور اپنی غزل کو مفتی علیہ رحمہ سے خصوصی طور پر منسوب کیا۔ انہوں نے خود کو انکا روحانی شاگرد بھی قرار دیا ۔ اور کسرِ نفسی سے کام لیتے ہوئے جناب ایاز مفتی کو بھی درجہ ء استاد پر متمکن کر دیا۔ انہوں نے بے حد خوبصورت، مرصع غزل پیش کی۔ اور داد و تحسین کے سزاور ٹہرے۔ اس کے بعد دربھنگہ، بہار ۔ ہندوستان سے شاہنواز انور سے رابطہ کیا گیا۔ انہوں نے مفتی ء مرحوم کے مصرعہ ء طرح پر اپنی خوبصورت غزل پیش کر کے داد سمیٹی۔ اس پروگرام کو دنیا بھر میں ریڈیو ہیلتھ اینڈ ہیپینیس کی ویب سائٹ سے سنا بھی جا رہا تھا۔ اسکے بعد پاکستان سے وادیء سون سے تعلق رکھنے والے خوبصورت نوجوان شاعر جناب حافظ محمد الیاس کو دعوتِ سخن دی گئی۔ اور انہوں نے اپنا طرحی کلام پیش کیا۔ اب کراچی میں متعدد شعری مجموعوں کی خالق محترمہ شگفتہ شفیق سے رابطہ کیا گیا۔ اور انہوں نے اپنا خوبصورت طرحی کلام پیش کیا اور اس ایونٹ میں شرکت کو تاریخی قرار دیا اور سید ایاز مفتی اور الطاف بخاری کا شکریہ ادا کیا۔

الطاف بخاری نے اس موقع پر نظامت کرتے ہوئے بتایا ۔ کہ ٹائم کی قلت کی وجہ سے جن شعراء سے رابطہ نہ ہوسکے گا۔ ان سے دوبارہ رابطہ شاید نہ کیا جاسکے ۔ تاہم پاکستان سے رباب اعوان، شائستہ مفتی، احسان الہی احسان اور ہندوستان سے معروف شاعر جناب خمار دہلوی اور ذہینہ صدیقی سے رابطہ نہ ہوسکا۔ اب گجرات ۔پاکستان سے محترم نیر صدیقی سے رابطہ کیا ۔ انہوں نے عبدالستار مفتی فورم میں کہی گئی اپنی مزاحیہ غزل پیش کر کے رنگ ِ محفل بدل دیا۔ اسکے بعد سری لنکا سے قاضی راشد متین صاحب کو دعوت سخن دی گئی ۔ اور اس کے بعد کراچی سے سخن افروز کی خالق محترمہ افروز رضوی کو دعوتِ کلام دی گئی اور انہوں نے بے حد خوبصورت کلام پیش کر کے داد حاصل کی۔ اسکے بعد حسن ابدال راولپنڈی کے معروف شاعر اور موجِ غزل فورم کے روح ِ رواں جناب ہاشم علی خان ہمدم کو دعوتِ سخن دی گئی ۔ جنہوں نے عبدالستار مفتی فورم کے منتظمین کو زبردست خراج ِ عقیدت پیش کیا اور اس مشاعرے سے مرتب ہونے والے کلام کو ادب کا ایک بیش بہا سرمایہ قرار دیا۔ اب ہندوستان کے ہردلعزیز اور معروف شاعر جناب امین جیسپوری سے رابطہ کیا گیا۔ مگر جیسپوری صاحب کی گفتگو فنی خرابی کے باعث جاری نہ رہ سکی ۔ اس موقع نے ناظم مشاعرہ جناب الطاف بخاری نے دو گھنٹے کے اس پروگرام میں بچ جانیوالے ٹائم کو دیکھتے ہوئے ہندوستان سے تعلق رکھنے والے اس عالمی مشاعرے کے مہمان ِ خصوصی ، برقِ سخن اور روح ِ سخن کے خالق جناب ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی صاحب کو دعوتِ سخن دی۔ انہوں نے حضرتِ سید عبد الستار مفتی علیہ رحمہ کی ذات کو زبردست منظوم خراج ِ عقیدت پیش کیا ۔ اور اس تحریک کے روح ِ رواں جناب سید ایاز مفتی صاحب کی خدمات کو بھی منظوم انداز میں سراہا ۔ اس کے بعد انہوں نے اپنے خاص رنگ میں غزل پیش کی اور ہر کسی کو واہ واہ کرنے پر مجبور کر دیا۔ ان کے بعد ناظم مشاعرہ نے ان گولڈن جوبلی عالمی مشاعرہ کی صدارت کرنے والے اور چئیرمین سید عبدالستار مفتی فورم جناب سید ایاز مفتی کو دعوت ِ کلام دی۔ انہوں نے اپنی سلیس اور رواں شعروں سے محفل کو ایک نئے رنگ میں دوچار کیا۔ ہر کوئی انکی شاعری سے محظوظ ہوتا نظر آیا۔ ۔صاحب ِ صدر کے کلام کے بعد ہیوسٹن شہر کے سامعین کو کال کرنے کا موقع فراہم کیا گیا۔ اس موقع پر لوگوں نے اس مشاعرے کے انعقاد پر بے حد مسرت کا اظہار کیا اور اس عالمی ایونٹ کو ایک تاریخی کوشش قرار دیتے ہوئے امید ظاہر کی کہ ریڈیو ہیلتھ اینڈ ہیپینیس آئندہ بھی اس قسم کے پروگرام پیش کرتا رہے گا۔

فیس بک میسجز میں وہ شعراء جن سے رابطہ نہ ہوسکا ۔ انہوں نے بھی چئیرمین ایاز مفتی اور انکے دستِ راست جناب الطاف بخاری کو اس کامیاب پروگرام کرنے پر دل کی اتھاہ گہرائیوں سے مبارکباد پیش کی۔ ہندوستان سے خمار دہلوی نے مفتی ء مرحوم کے مصرعہ ء طرح سے اپنی دلی وابستگی کا اعتراف کیا۔ کچھ اسی قسم کے جذبات محترمہ ذہینہ صدیقی کے تھے ۔ محترمہ نازیہ ملک ، رباب اعوان ، شائستہ مفتی ، احسان الہی احسان ، سید تراب حیدر ، غضنفر علی اور امین جیسپوری اور ایم طارق راہی صاحب نے بھی اس پروگرام کے انعقاد پر بے حد مبارکباد دی ۔