اشاعت کے باوقار 30 سال

سوویت یونین کا چلی سے ورلڈ کپ فٹ بال میچ نہ کھیلنے کا اعلان

سوویت یونین نے اعلان کیا کہ حال ہی میں چلی کے صدر سالویڈار ایلنڈے کی حکومت کا تختہ الٹنے کے بعد 27 نومبر کو سوویت ٹیم چلی کے ساتھ سان تیاگو میں میچ نہیں کھیلے گی۔ سوویت یونین اور چلی کی ٹیموں کے درمیان ماسکو میں ہونے والا میچ بغیر کسی گول کے برابر تھا ۔ سوویت یونین نے سان تیاگو کے سٹیڈیم میں کھیلنے سے اس لئے منع کر دیا تھا کہ وہاں حکومت کا تختہ الٹنے کے لئے صدر سالویڈار کا خون بہایا گیا تھا۔ ورلڈ کپ کی تاریخ میں سیاسی بنیاد پر کھیل کسا بائیکاٹ کرنے کا یہ پہلا واقعہ تھا۔ انٹرنیشنل فٹ بال فیڈریشن نے حتمی فیصلے کے لئے 11 نومبر تل مہلت دی تھی۔ روس نے یہ تجویز پیش کی کہ میچ کسی تیسرے غیر جانب دار ملک میں کھیلا جائے ۔ مگر فیڈریشن نے یہ تجویز ماننے سے انکار کر دیا اور سوویت ٹیم کو ڈسکوالیفائی کر دیا۔